RSS

Category Archives: GHAALIB

Ghaalib ke bare meiN

JASHN E REKHTA

Jashn e Rekhta has a wonderful array of videos in YouTube and my intention is to bring them all to my readers with this wonderful discussion of Urdu in Indian courts.

Hilarious is the place where a judge quotes a sher of Ghalib in his judgement but adds that this is a sher from a ghazal sung by Jagjeet Singh!. No mention of Ghalib!.

Advertisements
 

HAPPY BIRTHDAY MIRZA GHALIB

Celebrating Ghalib’s 220th birthday with Google India.
نہ تھا کچھ تو خدا تھا کچھ نہ ہوتا توخدا ہوتا
  • Mirza Ghalib’s 220th Birthday. December 27, 2017

  • Today we celebrate one of Urdu literature’s most iconic poets, Mirza Asadullah Baig Khan, known in popular culture by many names, but most commonly as Ghalib (meaning conqueror).

    Born in the India and saw the reign of the last Mughal Emperor Bahadur Shah,Zafar, Ghalib showed a gift for language at an early age and was educated in Persian, Urdu, and Arabic.

    His verse is characterized by a lingering sadness borne of a tumultuous and often tragic life — from being orphaned at an early age, to losing all of his seven children in their infancy, to the political upheaval that surrounded the fall of Mughal rule in India. He struggled financially, never holding a regular paying job but instead depending on patronage from royalty and more affluent friends.

    But despite these hardships, Ghalib navigated his circumstances with wit, intellect, and an all-encompassing love for life. His contributions to Urdu poetry and prose were not fully appreciated in his lifetime, but his legacy has come to be widely celebrated, most particularly for his mastery of the Urdu ghazal (amatory poem).

    Irshaad mukarrar, Mirza!

    Early concepts of the Doodle below

 
1 Comment

Posted by on December 28, 2017 in adab and literature, GHAALIB

 

YEH TERA BAYAN GHALIB

You will do well to start listening this program when you have at least two hours of peace and quiet. I assure you you will wish it could continue further….

A wonderful program on Ghalib, with a myriad of great singers and other dignitaries like Amjad islam Amjad, Nasiruddin Shah etc in attendance.

 
2 Comments

Posted by on November 23, 2017 in GHAALIB, videos

 

GHALIB AUR MEER TAQI MEER, AAMNE SAAMNE

GHALIB AND MEER TAQI MEER, AAMNE SAAMNE

دو اشعار اور ایک مضمون –  فیصلہ آپ کریں کے کون سا بہتر ہے-

روشن ہے اس طرح دل ویراں میں داغ ایک

اجڑے نگر میں جیسے جلے ہے چراغ ایک

میر تقی میر

لوگوں کو ہے خورشید _ جہاں تاب کا دھوکا

ہر روز دکھاتا ہوں میں ایک داغ _ نہاں اور

غالب

===============================================================

دو اشعار اور ایک مضمون –  فیصلہ آپ کریں کے کون سا بہتر ہے-

دل کی ویرانی کا کیا مذ کور

یہ نگر سو مرتبہ لوٹا گیا

میر تقی میر

کوئی ویرانی سی ویرانی ہے

د شت کو د یکھ کے گھر یاد آیا

غالب

=========================================================

عشق کرتے ہیں اس پری رو سے

میر صاحب بھی کیا دیوانے ہیں

میر تقی میر

گدا سمجھ کہ وہ  چپ تھا جو میری شامت آ ئی

اٹھا  اور اٹھ کے قدم میں نے پاسباں کے لئے

غالب

=================================================================

پتہ پتہ بوٹا بوٹا حال ہمارا جانے ہے

جانے نہ جانے گل ہی نہ جانے، باغ تو سارا جانے ہے

میر تقی میر

ہم نے مانا کہ تغافل نہ کرو گے لیکن

خاک ہو جائیں گے ہم تم کو خبر ہونے تک

غالب

آخری شعر زبردستی کا ہے—– ہم کو غالب کے دیوان میں پتہ پتہ بوٹا بوٹا — کے مساوی کوئی ایک شعر نہیں ملا – لیکن اتنا بھی نہیں –  دونوں اشعار میں جس امر کا زکر ہے وہ ہے معشوق کی  خبر گیری کا یا بے خبری کا، یعنی تغافل-

 

 
2 Comments

Posted by on November 18, 2017 in adab and literature, GHAALIB

 

IQBAL VS GHALIB

I AM NO EXPERT OF GHALIB OR OF IQBAL, BUT, I FEEL THERE IS SOME DIFFERENCE IN THEIR STYLE.

غالب اور اقبال دونوں عظیم ہیں- عظیم تر کا تعین کرنا ممکن اس لیےؑ نہیں ہے کہ دونوں کا کلام مختلف مزاج کا حامل ہے-

فرق اگر جاننا ہو تو دل اور دماغ کے فرق، بے خودی اور خودی کے فرق کی طرف توجہ دینا ہو گی-

دمک اور چمک کا فرق بھی نظر میں رکھنا ہو گا-

فراق اور وصال کا بھی-  

مے سے غرض نشاط ہے کس رو سیاہ کو

اک گونہ بے خودی مجھے دن رات چاہیے

 

خودی کو کر بلند اتنا کہ ہر تقدیر سے پہلے

خدا بندے سے خود پوچھے بتا تیری رضا کیا ہے-

 

جی ڈھونڈتا ہے پھر وہی فرصت کے رات دن

بیٹھے رہیں تصور جاناں کیےؑ ہوےؑ

 

اپنے من میں ڈوب کر پا جا سراغ زندگی

تو اگر میرا نہیں بنتا نہ بن اپنا تو بن

 

یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصال یار ہوتا

اگر اور جیتے رہتے یہ ہی انتظار ہوتا

 

مانا کہ تیری دید کے قابل نہیں ہوں میں

تو میرا شوق دیکھ میرا انتظار دیکھ۔

Disclaimer: Since I am no expert on either Ghalib or on Iqbal, the above observation may entirely be wrong. Please forgive me if you think different. To disprove any thing one counter example suffices. To prove something on the other hand, no amount of examples are enough. I have tried to give only a few examples above. The aim is to provoke a debate. a healthy one. 

 
2 Comments

Posted by on April 10, 2017 in GHAALIB, Ghalib ki Shan meiN

 

KAHAN GHALIB

‘لفظ ‘کہاں’ کہاں کہاں استعمال ہوتا ہے یہاں اسی بات پر بات ہو گی-

غالب کے دو شعر یاد آ رہے ہیں-

1- فکر دنیا میں سر کھپاتا ہوں

میں کہاں اور یہ وبال کہاں

  2- کہاں میخانے کا دروازہ غالب اور کہاں واعظ

پر اتنا جانتے ہیں کل وہ جاتا تھا کہ ہم نکلے

  غالب پر لب کشایؑ کی جسارت کرنے پر

اب آپ کوپورا اختیار ہے کہ ہم کو کہیں کہاں راجا بھوج اور کہاں کنگو تیلی

ایک دن ہماری بیگم شاپنگ مال میں کھو گیؑں

ہہت تلاش کیا آخر ایک دوست کے کہنے پر ایک خوبصورت خاتون سے کھڑے ہو کر باتیں کرنے لگے

– فورا بیگم نمودار ہویؑیں اور کہا ‘ تم یہاں ہو- ہم نے تم کو کہاں کہاں نہیں ڈھونڈا    

بچپن میں سبزی والا آخر میں ایک نیبو اور دو تین ہری مرچیں تھیلے میں مفت ڈال دیتا تھا- 

ہاں ہم تھیلا لے کر بازار جاتے تھے- 

تھیلا جو پرانی پتلون کو کاٹ کر بنا یا جاتا تھا

اب ہم آپ کو نیبو اور ہری مرچ مفت میں دے رہے ہیں-

سب کہاں کچھ لالہ و گل میں نمایاں ہو گیؑیں

خاک میں کیا صورتیں ہوں گی کہ پنہاں ہو گیؑیں

 

وفا کیسی کہاں کا عشق جب سر پھوڑنا ٹہرا

تو پھر اے سنگ دل تیرا ہی سنک آستاں کیوں ہو-

 

 
2 Comments

Posted by on February 9, 2017 in adab and literature, GHAALIB

 

GHALIB AUR MEER TAQI MEER, AAMNE SAAMNE.

 

GHALIB AND MEER TAQI MEER, AAMNE SAAMNE

دو اشعار اور ایک مضمون –  فیصلہ آپ کریں کے کون سا بہتر ہے-

روشن ہے اس طرح دل ویراں میں داغ ایک

اجڑے نگر میں جیسے جلے ہے چراغ ایک

میر تقی میر

لوگوں کو ہے خورشید _ جہاں تاب کا دھوکہ

ہر روز دکھاتا ہوں میں ایک داغ _ نہاں اور

غالب

 

دو اشعار اور ایک مضمون –  فیصلہ آپ کریں کے کون سا بہتر ہے-

دل کی ویرانی کا کیا مذ کور

یہ نگر سو مرتبہ لوٹا گیا

میر تقی میر

کوئی ویرانی سی ویرانی ہے

د شت کو د یکھ کے گھر یاد آیا

غالب

عشق کرتے ہیں اس پری رو سے

میر صاحب بھی کیا دیوانے ہیں

میر تقی میر

گدا سمجھ کہ وہ  چپ تھا جو میری شامت آ ئی

اٹھا  اور اٹھ کے قدم میں نے پاسباں کے لئے

غالب

پتہ پتہ بوٹا بوٹا حال ہمارا جانے ہے

جانے نہ جانے گل ہی نہ جانے، باغ تو سارا جانے ہے

میر تقی میر

ہم نے مانا کہ تغافل نہ کرو گے لیکن

خاک ہو جائیں گے ہم تم کو خبر ہونے تک

غالب

آخری شعر زبردستی کا ہے—– ہم کو غالب کے دیوان میں پتہ پتہ بوٹا بوٹا — کے مساوی کوئی ایک شعر نہیں ملا-

 
Leave a comment

Posted by on October 16, 2015 in GHAALIB