RSS

Monthly Archives: March 2014

GHALIB, MEER, GULZAR,

I have noticed some ashaars of different poets dealing with similar themes. I have endeavoured to collect some of them for comparison of style and depth.

dark images 006

GHALIB, MEER, GULZAR ON

1. SUN

گور کس دل جلے کی ہے یہ فلک

شولہ ایک صبح  یاں سے اٹھتا ہے

Gor kis diljale ki hai yeh falak

Solah ek subh yan se uthta hai

Meer

لوگوں کو ہے خورشید _ جہاں تاب کا دھوکہ

ہر روز دکھاتا ہوں میں ایک داغ _ نہاں اور

Logon ko hai khursheed e jahan tab ka dhoka

Har roz dikhaata hun main ek daagh e nihan aur

ghalib

 —————————————————————————————————

2. ASHK (TEAR)

اشک آنکھ میں کب نہیں آتا

لہو آتا ہے جب نہیں آتا

Ashk aankh mein kab nahin aata

Lahu aata hai jab nahin aata

Meer

رگوں میں دوڑ نے پھرنے کے ہم نہیں قایل

جب آنکھ ہی سے نہ ٹپکا تو پھر لہو کیا ہے

  Ragon mein daudne phirne ke ham nahin qayel

Jab aankh hi se na tapka to phir lahu kya hai.

GHALIB

————————————————————————–

3. DUNYA AND YAAR

غم _ دنیا بھی  غم _ یارمیں شامل کر لو

نشہ بڑھتا ہے شرابیں جو شرابوں میں ملیں

Gham e duniya bhi gham e yaar mein shamil kar lo

Nasha badhta hai sharaaben jo sharaabon mein milein.

Ahmad Fraz

درد _ دل بھی غم _ دنیا کے برابر سے اٹھا

آگ صحرا میں لگی اور دھواں گھر سے اٹھا

Dard e dil bhi ghame duniya ke baraber se utha

Aag sahra mein lagi aur dhuaN ghar se utha.

تابش _ حسن بھی تھی آتش _ دنیا بھی مگر

شولہ جس نے مجھے پھونکا میرے اندر سے اٹھا

Taabish e husn bhi thi aatish e dunya bhi magar

Shoala jis ne mujhe phooNka mere ander  se utha.

Mustafa Zaidi

————————————————————————————————

4. zuban (Tounge)

سلگ نہ جاوے اگر سنے وہ

جو بات میری زباں تلے ہے

sulag nah jawe agar sune woh

jo baat meri zuban tale hai

Gulzaar

ہم بھی  منہ میں زبان رکھتے ہیں

کاش پوچھو کہ مدعا کیا ہے

ham bhi munh mein zuban rakhte hain

kaash puchho kh mudduwa kya hai.

Ghalib

نہ بولوں میں تو کلیجہ پھونکے

جو بول دوں تو زباں جلے ہے

na bolun main to kalejah phoonke

jo bol doon to zaban jale hai

Gulzar

ہے کچھ ایسی ہی بات جو چپ ہوں

ورنہ کیا بات کر نہیں آتی

hai kuchh ayesi hi baat jo chup hun

warnah kya baat kar nahin aati.

Ghalib

—————————————————————————————–

5. Ishq (Love)

یہ عشق نہیں آساں اتنا تو سمجھ لیجیے

اک آگ کا دریا ہے اور ڈوب کے جانا ہے

ye ishq nahii.n aasaa.N itanaa to samajh lije
ek aag kaa dariyaa hai aur Duub ke jaanaa hai

Jigar Moradabadi

یہ عشق ہے نامراد ایسا

کہ جان لیوے تبھی ٹلے ہے

 yeh ishq hai naamuraad aisa

ke jaan lewe tabhi tale hai.

Gulzar

عشق پر زور نہیں ہے یہ وہ آتش غالب

کہ لگا یے نہ لگے اور بجھاے  نہ بنے

 Ishq par zor nahin hai yeh woh aatish ghalib

ke lagaaye na lage aur bujhaye na bane.

Ghalib

———————————————————————————————–

6. BELOVED (MAHBOOB)

سادگی بانکپن اغماز شرارت شوخی

تو نے انزاز وہ پاے ہیں کہ جی جانتا ہے

Saadgi baankpan aghmaaz sharaarat shokhi

Tu ne andaaz who paaye hain ke jee janta hai

 Dagh Dehlvi داغ دہلوی

بلاے جاں  ہے غالب اس کی ہر بات

عبارت کیا اشارت کیا ادا کیا

Balaaye jaan hai ghalib us ki har baat

Ibaarat kya isharat kya adaa kya

 Ghalibغالب

===================================================

 
8 Comments

Posted by on March 18, 2014 in adab and literature

 

Tags: , , , , , , , , , ,

NAMURAD ISHQ

The ghazal in unique Hindustani style, and the simple form leaves you stunned in its deep meanings and great expressions. It has been superbly sung by Rahat Fatheh Ali Khan in the film Dedh Ishqia. (This song reminded me of “JabaN pe laaga namak isk ka..of Omkara). Gulzar only can write these line.

نہ بولوں میں تو کلیجہ پھونکے 

جو بول دوں تو زباں جلے ہے 

 

سلگ نہ جاوے اگر سنے وہ 

جو بات میری زباں تلے ہے 

 

لگے تو پھر یوں کہ روگ لاگے 

نہ سانس آوے نہ سانس جاوے 

 

یہ عشق ہے نامراد ایسا 

کہ جان لیوے تبھی ٹلے ہے

ہماری حالت پے کتنا رووے ہے 

آسماں بھی تو دیکھ لینا 

 

کہ سرخ ہو جاویں اس کی آنکھیں بھی 

جیسے جیسے یہ دن ڈھلے ہے 

 

Na bolun main to kaleja phunke

Jo bol dun to zaban jale hai

 

Sulag na jawe agar sune who

Jo baat meri zuban tale hai

 

Lage to phir youn ke rog laage

Na saans awe na saans jawe

 

Yeh ishq hai na murad aisa

Ke jaan lewe tabhi Tale hai

 

Hamari haalat pe kitna rowe hai

Aasman bhi tu dekh lijo

 

Ke surkh ho jawen uski aankhein bhi

Jaise jaise ye din dhale hai 

 The last two lines allude the sunset and compare with the weeping of the sky.

 
2 Comments

Posted by on March 1, 2014 in adab and literature

 

Tags: , , , , , ,