RSS

JOHN ELIA

09 Nov
Jaun Elia (Urdu: جون ایلیا‎, December 14, 1931 – November 8, 2002)
YESTERDAY WAS HIS DEATH ANNIVERSARY. IT IS FITTING THAT WE COMMEMORATE THIS DATE BY REMEMBERING HIS POETRY. I BEGIN BY THE FOLLOWING WONDERFUL GHAZAL.
For a great write up on John Elia, please go to bbc Urdu:

Umar Guzre gi Imtehan mein kya…

Roman Urdu and translation are given after Urdu ghazal.

خاموشی که رہی ہے کان میں کیا

آ رہا ہے مرے گمان میں کیا

عمر  گزرے گی امتحان میں کیا

داغ ہی دینگے مجھکو دان میں کیا

میری ہر بات بے اثر ہی رہی

نقص ہے کچھ میرے بیان میں کیا

ہم کو تو کوئی ٹوکتا بھی نہیں

یہی ہوتا ہے خاندان میں کیا

اپنی محرومیاں چھپاتے ہیں

ہم غریبوں کی آن بان میں ک

خود کو جانا جدا زمانے سے

آ گیا تھا میرے گمان میں کیا

بولتے کیوں نہیں میرے حق میں

آبلے پڑ گئے ہیں  زبان میں کیا

ہے نسیم _ بہار گرد آلود

خاک اڑتی ہے اس مکان میں کیا

وہ ملے تو یہ پوچھنا ہے مجھے

اب بھی  ہوں میں تیری امان میں کیا

یوں جو تکتا ہے ہے آسمان کو تو
کوئی رہتا ہے آسمان میں کیا

یہ مجھے چین کیوں نہیں پڑتا

ایک ہی شخص تھا جہان میں کیا

جوں ایلیا

khamoshi kah rahi hai kaan mein kya
aa raha hai mere gumaan mein kya
[The silence is whispering in my ears something, I am hearing in my ears something (else)]
umar guzregi imtehaan mein kya
daagh hi denge mujh ko daan mein kya
[Am I here to spend entire life facing hurdles?, Are you to give me only the pain?]
meri har baat be asar hi rahi
naqs hai kuch mere bayaan mein kya
[whatever I said wend unheeded, Is there a fault in my speech?]
hum ko to koi tokta bhi nahin
yahi hota hai khandaan mein kya
[No one even corrects me these days, Is that how a family behaves?]
apni mehroomiyan chhupate hain
hum ghareebon ki aan baan mein kya
[We only try to cover up our failings, What is there that we the poor have to show off]
 khud ko jaana juda zammane se
aa gaya tha mere gumaan mein kya
[Thought we were different, what presumptuous was the thought]
bolte kyun nahin mere haq mein
aable paR gaye hain zubaan mein kya
[Why no one speaks in my favour, Is the tongue full of blisters?] 
hai naseem e bahaar gard aalood
khaak uRti hai us makaan mein kya.
[The spring breeze caries an amount of dust, has this world gone to dust?] 


woh mile to yeh poochhna hai mujhe
ab bhi hun main teri amaan mein kya

[I have a question if ever we should meet, Am I still in your protection?]  

yun jo takta hai aasmaan ko tu
koi rehta hai aasmaan mein kya

[I see you staring at the sky always, Is there some one living up there?

yeh mujhe chain kyun nahin parta
aik hi shakhs tha jahan mein kya

[why do I find it hard to have peace of mind, was there only one person in this world?]

JOHN ELIA

{The last sher, yeh mujhe chain kyun nahi paRta…… has the quality found in many ahsaar of Ghalib: That it says a lot more than the words actually used could carry. In my opinion it says that I was in love with some one who have now gone (passed away or taken away by some rival ..) I cannot find peace now. Then he wonders why, there must be some one else who could provide solace to me, was there only that one person in the entire world?} 

[Acknowledgement: Copied from:
 
I have added two ashaar from Joh Elia’s Doha (1995) Mushayra which were missing here. I have also deleted one sher the meaning of which defied me. “
“dil kay aate hain jis ko dhyaan bohot
khud bhi aata hai apne dhyaan mein kya” ???????
I have also converted the ghazal to Urdu rasmul khat and have attempted to provide translations in English for readers who may find it hard to follow in Urdu. But of course, there are a lot more meaning than the literal translation could offer. One has to ponder and think the meanings that the shayer has intended.]
Advertisements
 
13 Comments

Posted by on November 9, 2013 in adab and literature

 

Tags: , , , , ,

13 responses to “JOHN ELIA

  1. Rafiullah Mian

    November 12, 2013 at 10:47 pm

    جون ایلیا کی ایک اچھی اور مشہور غزل شامل کی ہے آپ نے اپنے بلاگ پر کافی حد تک اچھے ترجمے کے ساتھ
    جس شعر کو آپ نے حذف کیا ہے، وہ اگر آپ اردو رسم الخط میں پڑھ لیتے تو مجھے یقین ہے کہ آپ کو اسے سمجھنے میں کوئی دشواری نہ ہوتی

    شعر یوں ہے
    دل، کہ آتے ہیں جس کو دھیان بہت
    خود بھی آتا ہے اپنے دھیان میں کیا

    یعنی میرا یہ دل، جس کو بہت دھیان آتے ہیں، کیا یہ خود اپنے ہی دھیان میں بھی آتا ہے یا نہیں

     
  2. shakilakhtar

    November 13, 2013 at 6:17 pm

    رفعی صاحب آپ نے یہ که کر کہ یہ غزل مشہور ہے ہمارے مختصر ترین مطا لعے کو اجاگر کر دیا. ہم نے اس دن اتفاق سے اسے جوں ایلیا کی خود کی آواز میں
    پر سنا اور بیحد پسند کیا.YOUTUBE
    خاص کر آخری شعر ……..ایک ہی شخص تھا جہاں میں کیا – آپ کا بہوت شکریہ اس شعر کی تشریح کا –
    دل، کہ آتے ہیں جس کو دھیان بہت
    خود بھی آتا ہے اپنے دھیان میں کیا.

    romanکا ہے اور “،” comma سارا کمال
    اردو میں کہ که کھ کے وغیرہ کو صحیح طور پر سمجھنا اکثر مشکل ہوتا ہے- ہم کو تو آپ جانتے ہیں اکثر باتیں سمجھ میں
    نہیں آتی ہیں-

    اس شعر کی تشریح سے ہم کو لگا کہ اس میں بہت ہی زیادہ معنی ہے-. جون ایلیا نے شاید
    BERTRAND RUSSEL کے
    PARADOX کو اپنے انداز میں منظوم کیا ہے
    :SET OF ALL SETS

    یا یہ کہ خدا کاینات سے با ہر ہے یا کاینات کا حصّہ ہے – یہ بحث ذرا لمبی ہو جائے گی-

    آپ کا بہت شکریہ-

     
  3. White Pearl

    November 15, 2013 at 5:06 am

    Waah bohat khoob…… I have been reading Jaun elia lately and he writes so impressive…..Love it.

     
    • shakilakhtar

      November 15, 2013 at 8:36 am

      Thank you very much for liking. I am happy you came. Hope to see you more often too.

       
      • White Pearl

        November 16, 2013 at 12:53 am

        I will visit more often Sir InshAllah !

         
  4. Rafiullah Mian

    November 21, 2013 at 7:07 pm

    اگر پوری غزل کی فضا پر نظر دوڑائیں تو صاف نظر آتا ہے کہ اس کی فضا اکہری ہے، یعنی ہمیں اشعار یک سطحی ملتے ہیں- بین السطور کسی اور، اور اعلا معانی کا فقدان واضح طور پر محسوس ہوتا ہے- تمام اشعار ہمارے شعور کی پہلی سطح کو چھوتے ہیں اور ہمیں وہیں دکھاتے ہیں جو بالکل سامنے کی بات ہے- مثال کے طور پر صرف اس ایک شعر کو دیکھ لیں
    ہم کو تو کوئی ٹوکتا بھی نہیں
    یہی ہوتا ہے خاندان میں کیا
    اس سارے شعری فضا میں ہمیں بس یہی ایک شعر ایسا ملتا ہے جو پڑھنے والے کو تھوڑی دیرکے لیے روک کر غور و فکر پر مجبور کرتا ہے
    دل، کہ آتے ہیں جس کو دھیان بہت
    خود بھی آتا ہے اپنے دھیان میں کیا
    لیکن جب آپ اس پر رک کر اس پر غور کرتے ہیں تو جو سامنے آتا ہے، اس کا اکہرا پن واضح ہوجاتا ہے، مثلاً
    جس طرح باقی غزل میں جون نے مختلف چیزوں کا سطحی طور پر ذکر کیا ہے، جیسے، کان، داغ، عمر، بیان، خاندان، زمانہ، گمان، زبان، مکان، جہان اور آسمان وغیرہ
    اسی طرح اس شعر میں دل کا بھی ذکر کسی ‘تہہ داری’ سے خالی نظر آتا ہے- دھیان آنا ایک عام سی بات ہے- اس شعر میں خاص بات یہ ہے کہ جون نے سوال کیا ہے کہ کیا دل بذات خود بھی اپنے پاس آنے والے دھیان میں آتا ہے
    اب آپ خود محسوس کرسکتے ہیں کہ اس میں خاص بات ہے ہی کیا- اگر ہم دل سے مراد کچھ اور لیں، تب بھی یہی معاملہ درپیش رہتا ہے- معنوی سطح پر اس شعر میں کچھ نظر نہیں آتا

     
    • shakilakhtar

      November 22, 2013 at 9:33 am

      بالکل بجا فرمایا جناب نے – اس طویل بحس کے بعد کیا کہا جا سکتا ہے- آپ کی نوازشوں کا شکریہ قبول کیجئے –

       
  5. zeeshan abbas

    November 30, 2014 at 6:48 am

    bohat aala ..khoob

     
    • shakilakhtar

      November 30, 2014 at 7:11 am

      thank you very much Zeeshan sahab

       
  6. saad salmana

    May 20, 2016 at 1:42 pm

    janiya usy nibhegi kis tarah wo khuda hai main to banda bhi nahi

    Mujhy yah mukamal gazal mil sakti hai
    for reference https://www.youtube.com/watch?v=nNNqVSftXAc

     
    • shakilakhtar

      May 22, 2016 at 10:31 pm

      Hi, got only two couplets, here:
      woh tabiyat ka meri, tha bhi nhin
      aur main to khud apna bhi nahin

      Jaaniye us se nibhe gi kis tarah
      Wo khuda hai, main to banda bhi nahin.

       

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

 
%d bloggers like this: