RSS

RAFIULLAH MIAN KI EK GHAZAL

22 Jun

I read this beautiful ghazal on Rafiullah Mian’s blog and was stunned by the depth, vigour and variety of jazbaat you see there. I am posting this here for the benifit of my readers, with his kind permission.

His blog address is  http://rafimian.wordpress.com/

 

غزل

جسم سے ہٹ کر کبھی سنسار میں تنہا رہا
اور کبھی یہ دکھ کہ میں اخبار میں تنہا رہا

Jism say hat kar kabhi sansaar main tanha raha

Aor kabhi ye dukh k main akhbaar main tanha raha

اپنے کمرے کے در و دیوار میں تنہا رہا
گھر سے نکلا تو کھلے بازار میں تنہا رہا

Apne kamray k dar-o-deewar main tanha raha

Ghar say nikla tu khulay bazaar main tanha raha

دیکھنے آتے رہے انبوہ کے انبوہ اور
میں کسی فن کار کے شاہکار میں تنہا رہا

 Dekhne aate rahe anboh k anboh aor

 Main kisi fankaar k shaahkaar main tanha raha

دکھ سے ایسی انسیت اس کی وجہ سے ہوگئی
خود میں اپنے ہی دل_ سرشار میں تنہا رہا

Dukh say aesi unsiat oski waja say hogayi

Khud main apne hi dil-e-sarshaar main tanha raha

کھالیا اک عمر دھوکا، پھر کھلا، اس بزم میں
پرکشش تھا جو، اُسی کردار میں تنہا رہا

Khaa lia ik umr dhoka, phir khula, is bazm main

Purkashish tha jo, osi kirdaar main tanha raha

تُو نہ سمجھا ہے مرے اخلاص کو، کچھ غم نہیں
کیاکہوں، میں اپنے ہی گھر بار میں تنہا رہا

 Tu na samjha hay meray ikhlaas ko, kuch gham nahi

 Kia kahoN, main apne hi ghar baar main tanha raha

تھے بہت جو تیری قربت میں پھلے پھولے، وہیں
ایک تھا ایسا، تری سرکار میں تنہا رہا

Thay boht jo teri qurbat main phalay-phoolay, waheeN

Aik tha aesa, teri sarkaar main tanha raha

اک طرف یاروں کی محفل میں ملیں تنہائیاں
اک طرف برسوں تلک اغیار میں تنہا رہا

Ik taraf yaaroN ki mehfil main mileeN tanhaayiaN

Ik taraf barsoN talak aghyaar main tanha raha

گاؤں کی پرکیف سانسوں نے مجھے کھینچا، مگر
خوشبوؤں میں، دامن_ کہسار میں تنہا رہا

GaaoN ki purkaif saansoN nay mujhe khencha, magar

KhushbowoN main, daaman-e-kohsaar main tanha raha

کوئی کرتا کیا مدد میری، دکھاتا کیا اُسے
اک خیال_ باعث_ آزار میں تنہا رہا

Koi karta kia madad meri, dikhata kia osay

Ik khayal-e-baais-e-azaar main tanha raha

اجنبیت کا کھلا اظہار پھولوں نے کیا
اور میں شرمندہ سا گل زار میں تنہا رہا

Ajnabiyat ka khula izhaar pholoN nay kia

Aor main sharminda sa gulzaar main tanha raha

ظالموں نے کیسی کیسی قامتوں کو ڈھادیا
نوحہ گر اک کوچہٴ مسمار میں تنہا رہا

ZaalimoN nay kesi kesi qaamatoN ko dhaa dia

Noha-gar ik koocha-e-mismaar main tanha raha

آرہی ہے ٹھیکری سے درد کی تازہ کھنک
قافلہ تاریخ کے اسرار میں تنہا رہا

Aarahi hay theekri say dard ki taaza khanak

Qaafila taareekh k asraar main tanha raha

کایناتی وسعتوں میں گردشیں ہوں یا سکوت
آدمی تو ثابت و سیٌار میں تنہا رہا

Kaayinati wus’atoN main gardisheN hoN ya sakoot

Aadmi tu saabit-o-sayyaar main tanha raha

غم خوشی کے گاؤں میں رقصاں رہا ہرپل رفیع
موسموں کے ہر حسیں تہوار میں تنہا رہا

Gham khushi k gaaoN main raqsaaN raha har pal Rafii

Mosimon k har haseeN tehwaar main tanha raha

 

Advertisements
 
6 Comments

Posted by on June 22, 2011 in Urdu Poetry

 

6 responses to “RAFIULLAH MIAN KI EK GHAZAL

  1. Rafiullah Mian

    June 22, 2011 at 11:58 pm

    I am very thankful to you Shkail Akhtar sahib.

     
    • shakilakhtar

      June 23, 2011 at 8:31 am

      I should thank you for permission, sir. Thekri mere zehen mein mustaqil khanak rahi hai. Ek be waqat chees ko aap ne khobsoorti se dwaam aur maqaam bakhsha hai. aur yeh ke aghyaar mein tanha raha .. etc all the shers it looks it is story of all those who feel and are concious, sensitive.

       
      • Rafiullah Mian

        June 23, 2011 at 7:44 pm

        Ye aik adeeb aor shayir ki khushqismati hoti hay k qaari os k fanparay ki juzyaat tak rasaayi hasil karleta hay aor is taraH os ki takhleeq say hiz uthata hay. isi ko Iblaagh kehte hein. Yani fankaar ne jo mehsoos kia, wo doosroN ko bhi osi tarah mehsoos karaday.
        Allah ap ko salamat rakhay.

         
  2. Mazhar Masood

    June 23, 2011 at 6:26 am

    Loneliness & insomnia are two such things that only one who has suffered them can understand. This Gazal has beautifully illustrated the pain & agony of being lonesome .

     
    • shakilakhtar

      June 23, 2011 at 7:50 am

      Dear Mazhar Saheb, Thanks. I am glad you could find words to describe but I am dumbfounded. I can only feel.

       
    • Rafiullah Mian

      June 23, 2011 at 7:48 pm

      Mazhar sahib,
      Thanks for understanding the Ghazal.

       

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

 
%d bloggers like this: